66.29.132.4 United States

11-Oct-2021

Kashmir Ki Aazadi

by admin

* کشمیر کی آزادی *

” کالم نگار سید عزیر “

 ریاست مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارت کے ظلم و ستم اور غاصبانہ قبضے سے ہم سب ہی باخبر ہیں . اس ستم وظلم کی وجہ سے لاکھوں گھرانے اب تک ہجرت کرنے پر مجبور ہوئے. تحریک آزادی کشمیر  کا جذبہ لے کر  آزادکشمیر میں ہجرت کرنے پر مجبور ہوئے  انہیں “مہاجرین جموں کشمیر ” کے نام سے پکارا جاتا . مہاجرین جموں کشمیر 1990-1989ء بھی ان میں شامل ہیں جنھوں نے اپنا گھر بار ، عزیز و اقارب ،زرمبادلہ سب کچھ تحریک آزادی کشمیر  کے لیے وقف کیا اور آج آزادکشمیر کے مختلف کیمپوں میں آباد ہیں .مہاجر ہونا ایک اعزاز کی بات ہے اور مہاجر ہونا سب سے مشکل  کام بھی  ہے .

   مہاجرین جموں کشمیر 1990ء مقبوضہ کشمیر کے مختلف شہروں سے ہجرت کر کے بیس کیمپ آزادکشمیر میں داخل ہوئے ان میں زیادہ تر مہاجرین کا تعلق مقبوضہ ضلع  پونچھ ، اوڑی اور دیگر علاقوں سے ہے .یہاں جب یہ داخل ہوئے تو پاک فوج ،حکومت پاکستان ، حکومت آزادکشمیر اور مقامی آبادی نےانہیں خوش آمدید کہا اور انہیں بنیادی سہولیات فراہم کی . مقامی افراد کا جتنا شکریہ ادا کیا جائے کم ہے جس طریقے سے انہوں نے مہاجرین گھرانوں کو اپنے گھروں میں آباد کیا اور ان کو بنیادی سہولیات دیں  تاریخ میں ان کا نام سنہرے الفاظ سے لکھا جائے گا . وقت گزرنے کے ساتھ ریاست آذادکشمیر کے مختلف اضلاع  میں مہاجرین کی عارضی آبادکاری کی گی .اس وقت جو آبادکاری کی گی وہ اس دور کی آبادی کو مدنظررکھ کر کی گی مگر حال میں (تیس  سال گزرنے کے بعد )یہ مسلہ شدید نوعیت اختیار کر چکا ہے .تیس  سال قبل جو جگہ دی گی وہ دو سے تین کمروں کی تھی جہاں دو سے تین  افراد زندگی بسر کر سکتے  مگر اب ان دو کمروں میں آٹھ  سے دس  افراد جوں توں کر کے زندگی بسر کر رہے . خوشی و غمی کے موقع پر شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا .

  گزشتہ کچھ ایام  سے مہاجرین جموں کشمیر 1990ء کی آبادکاری کی خبریں گردش کر رہی. جو ایک احسن اقدام ہے مگر مہاجرین کے مطالبات کو بھی ذہن نشین رکھا جانا چاہیے . سب سے پہلے یہ بات احکام بالا کو ذہن نشین رکھنی چاہیے کہ ان مہاجرین کی ہجرت کا جو بنیادی مقصد تھا وہ تحریک آزادی کشمیر ہے اس پر کسی بھی صورت میں کوئی سمجھوتہ نہیں ہو گا . دوسری بات ان مہاجرین نے گزشتہ تیس سال میں جو کمایا اپنے گھروں کو آباد کرنے میں خرچ کیا لہذا یہ گھر مستقل طور پر ان کے نام کر دئیے جائیں . ان مہاجرین کو زمین کی اشد ضرورت ہے ہر شادی شدہ گھرانے کو الگ سے زمین الرٹ کی جائے اور وہ کسی بیابان جنگل میں یا صحرا میں نہ ہو بل کہ جہاں ضروریات زندگی کی تمام سہولیات میسر ہوں . آبادکاری کی صورت میں مہاجرین کا گزارہ الاونس اور 6 فیصد کوٹہ بحال رکھا جائے . ہر شادی شدہ افراد کا الگ سے مہاجر کارڈ جاری کیا جائے . مستقل آبادکاری کے بعد ان مہاجرین کو یہ حق دیا جائے کہ وہ ویزہ کے ذریعے مقبوضہ کشمیر میں جانے کا حق رکھتے ہیں ان کو اپنے عزیزو اقارب سے ملنے کا حق دیا جائے .

  یقینا مہاجرین جموں کشمیر کے لیے حکومت جو بھی فیصلہ کرے گی اس میں مہاجرین کی رضامندی کو شامل رکھے گی کوئی بھی ایسا فیصلہ نہیں کرے گی جس سے افراتفری پھیلے . مہاجرین جموں کشمیر تحریک آزادی کشمیر کے حقیقی ہیرو ہیں انہوں نے جو قربانیاں دی ہیں وہ ناقابل فراموش ہیں تاریخ میں ان کا نام سنہرے الفاظ سے لکھا جائے گا . ان شاء اللہ  بہت جلد کشمیر کی آزادی کا سورج طلوع ہو گا

 * Independence of Kashmir *

“Columnist Sayed Uzair”

We are all aware of India’s oppression and aggression in the occupied state of Jammu and Kashmir. Millions of families have been forced to migrate so far because of this oppression. Forced to migrate to Azad Kashmir in the spirit of the Kashmir Independence Movement, they were called “Muhajireen Jammu and Kashmir”. Jammu and Kashmir refugees from 1990-1989 are also among those who dedicated their homes, relatives and foreign exchange to the Kashmir Independence Movement and today they are living in various camps in Azad Kashmir. It is an honor to be a refugee and a refugee. Being is also the hardest job.

Migrants from Jammu and Kashmir migrated from different cities of Occupied Kashmir in 1990 and entered base camps in Azad Kashmir. Most of these refugees are from Occupied Poonch, Ori and other areas. When they entered here, the Pakistan Army, Government of Pakistan, Government Azad Kashmir and the local population welcomed him and provided him with basic facilities. There is little to thank the locals for the way in which they settled the refugee families in their homes and gave them basic amenities. Their names will be written in golden words in history. With the passage of time, the state will make temporary resettlement of refugees in different districts of Azad Kashmir. The resettlement that will be done at that time will be done keeping in view the population of that period but recently (after thirty years) this issue has become serious. Thirty years ago, the space would be two to three rooms where two to three people could live, but now eight to ten people are living in these two rooms. Facing severe difficulties on the occasion of joy and sorrow.

News of the 1990 resettlement of Jammu and Kashmir refugees has been circulating for the past few days. Which is a good move but the demands of the refugees should also be kept in mind. First of all, the authorities should keep in mind that the main purpose of the migration of these refugees is the Kashmir Independence Movement and there will be no compromise under any circumstances. Secondly, what these refugees have earned in the last 30 years has been used to settle their houses, so these houses should be named after them permanently. These refugees desperately need land. Every married family should be given a separate land alert and they should not be in a desert or in a desert where all the necessities of life are available. In case of resettlement, the living allowance of the refugees and the 6% quota should be restored. A separate refugee card should be issued to each married person. After permanent resettlement, these refugees should be given the right to go to Occupied Kashmir through visa. They should be given the right to meet their dear relatives.

Of course, whatever the government decides for the refugees in Jammu and Kashmir will include the consent of the refugees. No one will make a decision that will spread chaos. The refugees are the real heroes of the Jammu and Kashmir Independence Movement. The sacrifices they have made are unforgettable. Their names will be written in golden words in history. Inshallah, the sun of Kashmir’s independence will soon rise

Related Posts

Leave a Comment

Translate »